zone name","placement name","placement id","https://www.profitablegatecpm.com/yinz9x0234?key=619b5ed2e8a3dd910e0a5484c0e04be9" rawalpindistudio.com,Popunder_1,15390402,"" link text link text maa islamic story in urdu | maa or jannat | urdu story about maa in urdu moral story

Ad Code

maa islamic story in urdu | maa or jannat | urdu story about maa in urdu moral story

maa islamic story in urdu,maa or jannat,urdu story about maa in urdu,urdu moral story
maa islamic story in urdu  maa or jannat  urdu story about maa in urdu moral story

دنیا میں ماں ایک ایسا رشتہ ہے جس کا نعم البدل نہیں ہو سکتا۔ ماں دنیا میں خدا کی محبت کی ایک شکل ہے۔ ماں سے زیادہ اولاد سے پیار کرنے والا کوئی نہیں۔ ماں کے قدموں میں جنت ہے۔ ماں اپنے بچوں کے لیے جیتی ہے اور بچے اس کی سب سے بڑی دولت ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے سورہ بنی اسرائیل، باب 15، آیات 23-24 میں فرمایا ہے، ’’اور تمہارے رب نے حکم دیا ہے کہ تم صرف اسی کی عبادت نہ کرو اور اپنے والدین کے ساتھ حسن سلوک کرو، اگر وہ تم تک پہنچ جائیں تو بوڑھے ان کے درمیان." ان میں سے ایک یا دونوں میں سے کسی ایک کو برا بھلا نہ کہو اور نہ انہیں جھڑکنا اور ان سے ادب سے بات کرنا اور ان کے سامنے عاجزی اور ہمدردی کے ساتھ جھکنا اور ان کے لیے دعا کرنا کہ اے میرے رب! ان پر رحم فرما۔ لیکن جس طرح انہوں نے مجھے بچپن میں پالا تھا، "سورۃ لقمان پارہ نمبر 21 آیت نمبر 14" اور اس بات پر زور دیا کہ ہم نے اپنے والدین کے حقوق انسان پر اٹھائے ہیں۔ ہاں، دو سالوں میں، ہم نے اسے مشورہ دیا کہ وہ میرا اور اپنے والدین کا شکر گزار ہو۔ "اسی طرح مکڑی آیت نمبر 20، آیت نمبر 8 ہے۔ ہم نے ایک شخص کو اپنے والدین کے ساتھ حسن سلوک کی ہدایت کی ہے کہ جب انسان ستاروں میں بسنے کی تیاریوں میں مصروف ہوتا ہے تو اپنے والدین کو بوجھ سمجھتا ہے اور غیر مسلموں کو نصیحت کرتا ہے۔ بوڑھے والدین کو لاوارث گھروں میں بھیجنے کے لیے پاکستان کے کئی نجی ٹی وی چینلز نے لاوارث سرکاری گھروں، بوڑھوں اور خواتین کی ایسی ویڈیوز عوام کو دکھائیں، بوڑھی خواتین رو رو کر کہتی ہیں کہ انھوں نے کئی سالوں سے اپنے بچوں کو نہیں دیکھا۔ اس بوڑھی ماں کا بیٹا اس پر اتنا مہربان ہوتا



اس کے لیے وہ کچھ رقم متروک مکان میں بھیجتا ہے۔ ماں اگر اللہ تعالیٰ کی محبت کی کوئی صورت ہو تو بچہ دونوں ماؤں کا ہے۔ اور ایک گیلی جگہ پر سرد رات گزارتا ہے۔ وہ کیا خواب دیکھتی ہے؟ وہ اپنے بیٹے کے سر پر سجانے کا خواب دیکھتی ہے۔ لیکن اسے کیا معلوم کہ یہ بیٹا اسے بوجھ سمجھ کر سرکاری لاوارث گھر بھیج دے گا۔ اللہ تعالیٰ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو بہت سی چیزوں سے آگاہ کیا ہے۔ حضورؐ کو معلوم تھا کہ آنے والے وقت میں بچے اپنی ماؤں کے ساتھ کیسا سلوک کریں گے۔ ایک دفعہ ایک سائل نے ہادی عالم سے پوچھا کہ حضور کب آئیں گے؟ انہوں نے کہا کہ مجھے اس کا علم نہیں۔ سائل نے پھر پوچھا کہ مجھے قیامت کے آنے کی کوئی نشانی بتاؤ؟ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جب بچے اپنی ماؤں کی تذلیل کریں گے تو قیامت کے آنے کی نشانیاں ہوں گی۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت عمر اور حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا کہ تمہاری زندگی میں اویس بن عامر نامی ایک شخص آئے گا، جس کا رنگ پیلا ہو گا، جس کے جسم پر سفید دھبہ ہو گا، وہ قرن کا رہنے والا اور قبیلہ قرنی سے ہو گا۔ آپ نے اسے امت کے لیے دعا کرنے کا کہا ہے۔ حضرت عمر حیران ہوئے کہ دعا اور یہ شخص! حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اس شخص نے اپنی ماں کی اس قدر خدمت کی ہے کہ جب وہ دعا کے لیے ہاتھ اٹھاتا ہے تو اللہ تعالیٰ اس کی دعا قبول فرماتا ہے۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ دس سال خلیفہ رہے، اس دوران انہیں اویس قرنی کا کوئی سراغ نہیں ملا تاکہ وہ حضور کا پیغام ان تک پہنچا سکیں۔ ایک مرتبہ حضرت عمرؓ نے تمام حاجیوں کو اکٹھا کیا اور فرمایا کہ تمام حجاج کھڑے ہو جائیں۔ جب سب کھڑے ہوں تو بیٹھ جائیں۔ صرف یمنیوں کو کھڑا ہونا چاہیے۔ جب سب بیٹھ گئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے باقی لوگوں سے کہا کہ بیٹھو، قرن قبیلے کے لوگ کھڑے ہو جاؤ۔ تو صرف ایک آدمی کھڑا رہا۔ حضرت عمرؓ نے پوچھا۔ آپ اویس بن عامر کو جانتے ہیں۔ تو وہ کہنے لگا



میرے بھائی کا ایک بیٹا ہے۔ حضرت عمرؓ نے فرمایا کہ وہ اب کہاں ہے؟ اس نے کہا کہ وہ عرفات میں اونٹ چرانے گیا تھا۔ حضرت عمر اور حضرت علی عرفات میں مقررہ جگہ پر پہنچے اور ایک شخص کو نماز پڑھتے ہوئے دیکھا تو نماز ختم ہونے کا انتظار کرنے لگے۔ نمازی کو لگا کہ کوئی مہمان اس کا انتظار کر رہے ہیں۔ جب نماز قصر ہوئی تو حضرت عمر نے پوچھا کہ کیا تم اویس قرنی ہو؟ تو اس نے جواب دیا ہاں میں اویس قرنی ہوں لیکن تم کون ہو؟ حضرت علیؓ نے فرمایا کہ یہ مسلمانوں کے خلیفہ حضرت عمر فاروقؓ ہیں اور میرا نام مرتضیٰ ہے۔ اس آدمی نے کہا، "سردار، کیا مجھ سے کوئی غلطی ہوئی ہے؟" اس نے کہا نہیں تم نے کوئی غلطی نہیں کی، تم نے پیغمبر کا پیغام پہنچانا ہے جو ہماری ذمہ داری ہے۔ کیا حکم دیا گیا ہے؟ حضرت علی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تھا کہ اویس قرانی میری امت کی مغفرت کی دعا کرو۔ اویس قرنی نے حیرت سے پوچھا، اگر میں آپ جیسا ہوتا، صحابہ اکرام تو کیا نماز پڑھوں! حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے کہا کہ یہ حضور کا پیغام ہے جو ہم آپ تک پہنچا رہے ہیں، اس کے بعد یہ دونوں وہاں سے اپنی ذمہ داری پوری کر کے چلے جائیں گے۔ اویس قرنی نے عمر بھر حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم پر عمل کیا اور روایت ہے کہ قیامت کے دن جب اویس قرنی جنت کے دروازے پر پہنچیں گے تو جنت کے دروازے پر روکا جائے گا تو حیران رہ جائے گا۔ پوچھو، اگرچہ اللہ تعالیٰ نے مجھے جنت میں بھیجا اور پھر دروازے پر روک دیا، پھر بھی حکم رہے گا۔ پیچھے مڑ کر دیکھو۔ لاکھوں لوگ ہیں۔ آپ کی دعاؤں کی وجہ سے اب آپ جہاں بھی انگلی اٹھائیں گے وہ سب آپ کے ساتھ جنت میں داخل ہوں گے۔ جنت واقعی ماں کے قدموں تلے ہے۔


Post a Comment

0 Comments

Rawalpindi Studio Youtbe Channel

'; (function() { var dsq = document.createElement('script'); dsq.type = 'text/javascript'; dsq.async = true; dsq.src = '//' + disqus_shortname + '.disqus.com/embed.js'; (document.getElementsByTagName('head')[0] || document.getElementsByTagName('body')[0]).appendChild(dsq); })();